مزید پڑھیں...

سوشلزم یا بربریت: عالمی صورتحال، پیش منظر اور لائحہ عمل

سوشلزم یا بربریت: عالمی صورتحال، پیش منظر اور لائحہ عمل

ہم ’طبقاتی جدوجہد‘ کی 41ویں کانگریس کی دوسری مجوزہ دستاویز ’سوشلزم یا بربریت: عالمی صورتحال، پیش منظر اور لائحہ عمل‘ شائع کر رہے ہیں جس میں بین الاقوامی سطح پر جاری کلیدی معاشی، سیاسی و سماجی عوامل کا احاطہ کیا گیا ہے اور آنے والے دنوں کے امکانات کا جائزہ بھی لیا گیا ہے۔

پاکستان تناظر 2024-25ء

پاکستان تناظر 2024-25ء

ہم اپنے قارئین کے لئے ’طبقاتی جدوجہد‘ کی 41ویں کانگریس کی پہلی مجوزہ دستاویز ’پاکستان تناظر 2024-25ء‘ شائع کر رہے ہیں۔ جس میں ایک تاریخی حوالے سے پاکستانی سیاست، ریاست، معیشت اور معاشرت کے تضادات و بحرانات، ملک کے طول و عرض میں سلگتے قومی سوال اور آنے والے دنوں میں تحریک کے امکانات کا تفصیلی جائزہ لیا گیا ہے۔

بلوچ یکجہتی مارچ کے ان مٹ نقوش

بلوچ یکجہتی مارچ کے ان مٹ نقوش

حالیہ مارچ اور دھرنے نے ایک بار پھر واضح کیا ہے کہ کوئی بھی مظلوم قوم ایک یکجا اکائی نہیں ہوتی بلکہ متحارب اور متضاد طبقات پر مشتمل ہوتی ہے۔ جس میں اس کے اپنے حکمران طبقے کا کردار سامراج کی گماشتگی پر ہی مبنی ہوتا ہے۔

الیکشن 2024ء: کیا کیا جائے؟

الیکشن 2024ء: کیا کیا جائے؟

مروجہ سیاسی قیادتیں پہلے سے ہی بڑی حد تک عوامی استرداد کا شکار ہیں۔ لیکن اس استرداد کو ایک انقلابی لائحہ عمل اور راستہ دینے کے لئے محنت کشوں اور وسیع تر عوام میں جانا انقلابیوں کا فریضہ ہے جس کی ادائیگی کے لئے انتخابی ماحول میں ملنے والے محدود سیاسی و سماجی مواقع کو بھی استعمال کیا جانا چاہئے۔

قومی سوال اور لینن

قومی سوال اور لینن

’’بورژوا قوم پرستی اور پرولتاری بین الاقوامیت دو ناقابل مصالحت نعرے ہیں جو پوری سرمایہ دارانہ دنیا میں دو دیوہیکل طبقاتی کیمپوں سے وابستہ ہیں اور قومی سوال کی طرف دو پالیسیوں بلکہ دنیا کو دیکھنے کے دو طریقوں کی غمازی کرتے ہیں‘‘

سرمایہ داری کی ماحولیاتی تباہی: سانس لینا بھی مضرِ صحت ہے!

سرمایہ داری کی ماحولیاتی تباہی: سانس لینا بھی مضرِ صحت ہے!

یہ آلودگی یا سموگ کوئی آسمانی آفت نہیں ہے بلکہ سرمایہ داری کے تحت انسانی سرگرمیوں کا ناگزیر نتیجہ ہے جس کی بنیادی وجوہات میں صنعتوں، اینٹوں کے بھٹوں اور کوئلے سے چلنے والے پاور پلانٹوں کا اخراج، سڑکوں اور تعمیراتی جگہوں سے اٹھنے والی دھول، فصلوں کی باقیات کو لگائی جانے والی آگ اور سب سے بڑھ کر ٹریفک کا دھواں شامل ہیں۔

جے کے این ایس ایف مسٹ یونیورسٹی کے آرگنائزر ارسلان احمد دانش کا تعزیتی ریفرنس

جے کے این ایس ایف مسٹ یونیورسٹی کے آرگنائزر ارسلان احمد دانش کا تعزیتی ریفرنس

ہنس مکھ نظر آنے والا نوجوان غیر معمولی صلاحیتیں رکھتا تھا۔ اس نے اپنے شوق کو بھی انقلاب کے ساتھ جوڑ لیا تھا۔ مسٹ یونیورسٹی میں تنظیم کو تعمیر کرنے کے ساتھ ساتھ اپنے علاقے میں بھی تنظیمی کام کو منظم کرتا رہا۔

FILE PHOTO: Afghan refugee children sit on a truck loaded with belongings as they along with their families prepare to return home, after Pakistan gives the last warning to undocumented immigrants to leave, outside the United Nations High Commissioner for Refugees (UNHCR) repatriation centres in Azakhel town in Nowshera, Pakistan October 30, 2023. REUTERS/Fayaz Aziz/File photo

سامراجیت، امیگریشن اور افغان مہاجرین

ہمارا مقامی محنت کش طبقے اور ان مہاجرین کو یہی پیغام ہے کہ ہر قسم کے تعصب اور تفریق سے بالا تر ہو کر اپنے اس مشترکہ حقیقی دشمن جو یہ سرمایہ دارانہ نظام ہے کے خلاف مل کر جدجہد کرنا ہو گی۔

سامراجی تضادات میں سلگتی دنیا

سامراجی تضادات میں سلگتی دنیا

حالات و واقعات نے ایک بار پھر ثابت کیا ہے کہ اس کرہ ارض پر فلسطینیوں کا کوئی حقیقی ساتھی اور ہمدرد موجود ہے تو وہ پھر دنیا بھر کے محکوم اور محنت کش عوام ہی ہیں جو مشرق سے مغرب تک دہشت گرد صیہونی ریاست اور اس کے پشت پناہ سامراجیوں کے خلاف سراپا احتجاج ہیں۔

فلسطین کیسے آزاد ہو گا؟

فلسطین کیسے آزاد ہو گا؟

اپنی فطرت سے مجبور اسرائیلی ریاست کو اگر شکست نہیں دی جاتی تو یہ فلسطینیوں کی نسل کشی کو مکمل کر کے اور فلسطین کو نقشے سے مٹا کر ہی دم لے گی۔

Pakistan Politics

نواز شریف کی واپسی

جن تضادات نے حالات کو اس نہج تک پہنچایا ہے ان میں سے ایک بھی حل نہیں ہوا۔ اسٹیبلشمنٹ یا ڈیپ سٹیٹ کے ساتھ نواز شریف کا رشتہ جتنا ناپائیدار پہلے تھا اتنا ہی آج ہے۔

فلسطینی عوام کے ساتھ یکجہتی… ایک متحد، سیکولر، جمہوری اور سوشلسٹ فلسطین کے لئے!

فلسطینی عوام کے ساتھ یکجہتی… ایک متحد، سیکولر، جمہوری اور سوشلسٹ فلسطین کے لئے!

سالہا سال کے تجربے سے یہ ثابت ہوا ہے سامراج کی طرف سے مصنوعی طور پر تخلیق کردہ ایک جابر اور دہشت گرد ریاست کے ہاتھوں ایک پوری قوم پر ظلم و جبر کے ہوتے ہوئے کوئی امن قائم نہیں ہو سکتا۔

افغان مہاجرین: جائیں تو جائیں کہاں؟

افغان مہاجرین: جائیں تو جائیں کہاں؟

اس نظام میں سرمائے کی نقل و حرکت تو آزاد ہے لیکن انسانوں کو سرحدوں میں قید کر کے ویزوں کا اسیر بنا دیا گیا ہے۔ کسی بھی معاشرے میں کسی انسان کا ”غیر قانونی“ سٹیٹس انسانیت کی تذلیل اور توہین کے مترادف ہے۔