لاہور (طبقاتی جدوجہد) کامریڈ لال خان کے بچھڑنے کے صدمے بھرے اعلان کے بعد سوشل میڈیا پر ڈاکٹر لال خان کی تصویروں، تحریروں اور تقاریر کی ویڈیوز کا سیلاب امڈ آیا اور پوری دنیا سے ہمیں تعزیتی پیغامات موصول ہوئے ہیں۔ جن میں سے کچھ چنیدہ پیغامات ہم تلخیص کیساتھ یہاں شائع کر رہے ہیں۔

محمد یوسف تاریگامی (ایم ایل اے بھارتی مقبوضہ کشمیر، رہنما کمیونسٹ پارٹی آف انڈیا)

انتہائی صدمے کی بات ہے کہ ایک عظیم مارکسسٹ اور انتھک انقلابی ہم میں نہیں رہے… ہم کشمیریوں نے ایک قابل اعتماد ساتھی کھویا ہے جس نے مشکل وقتوں میں ہمارا ساتھ دیا۔ یقین نہیں ہوتا… ہمارا عظیم انقلابی دوست زندہ باد!

درد کی اس گھڑی میں ہم عہد کرتے ہیں کہ ہم سامراج اور اس کے اتحادیوں کے خلاف انقلابی پرچم تلے جدوجہد جاری رکھیں گے۔ انہوں نے ایک بہتر دنیا تعمیر کرنے کے لئے بے باک جزبوں کے ساتھ ہماری حوصلہ افزائی کی۔ ہمارے پیارے کامریڈ آپ کی جدوجہد مستقبل میں بھی ہمارا حوصلہ بلند کرتی رہے گی۔

چوتھی انٹرنیشنل کا ایگزیکٹو بیورو (پیرس)

کامریڈ لال خان کے اعزاز میں…

ہمارے لئے یہ ایک افسوسناک خبر تھی کہ کامریڈ لال خان ہم میں نہیں رہے۔ ان کی طبقاتی جدوجہد کی چوتھی انٹرنیشنل کے ساتھ جڑت حالیہ تھی اور ہمارے لئے خصوصی اہمیت رکھتی تھی۔ انہوں نے ہماری تحریک کو مزید وسعت دی اور بہتر بنایا۔

عالمی، جنوبی ایشیائی اور پاکستان کی انقلابی جدوجہد میں ایک تجربہ کار انقلابی تھے۔ لال خان اور اس کے عہد کے کامریڈوں کی متحرک جدوجہد ہمارے لئے میراث ہے۔ جیسا کہ 69-1968ء کی تحریک کے دوران آمرانہ حکومت کے خلاف مزاحمت، جلا وطنی اور پھر غیر یقینی و خطرناک حالات میں ملک واپس جا کر انقلابی تحریک کی تعمیر جو واضح طور پر سوشلسٹ تھی اور سرمایہ داری کے خلاف تھی۔

ہمارے کامریڈ لال خان‘ فاروق طارق کی طرح ان لوگوں میں سے تھے جنہوں نے اپنا تجربہ نئی لڑاکا اور ریڈیکل نسل کے لئے چھوڑا ہے۔ انہوں نے آخری سانس تک اپنا شروع کا عزم زندہ رکھا۔ ہم انہیں خراج تحسین پیش کرتے ہیں۔

ہم ان کے پیاروں، طبقاتی جدوجہد کے کامریڈوں اور جدوجہد میں ان کے ساتھیوں کے غم میں برابر کے شریک ہیں۔

ہم اکٹھے ان کی طبقاتی جدوجہد کو جاری رکھیں گے۔

جوز کارلوس میرانڈا (پی ایس او ایل، برازیل)

پیارے کامریڈ کتنا دکھ بھرا دن ہے! کامریڈ لال خان کے بچھڑنے پر دل کی اتھاہ گہرائیوں اور انقلابی جذبات کیساتھ تعزیت کرتا ہوں۔ طبقاتی جدوجہد کے کامریڈوں، لال خان کے خاندان اور دوستوں سے تعزیت کرتا ہوں۔ کامریڈ لال خان آج اور ہمیشہ زندہ و جاوداں رہیں گے۔

پیئر روزے (ای ایس ایس ایف، فرانس)

لال خان ایک کامریڈ، ایک دوست، ایک ماضی اور ایک حال۔ میری خوش قسمتی تھی کہ نومبر 2018ء میں لاہور میں کامریڈ لال خان سے ملاقات ہوئی جب تمام مشکلات کے باوجود طبقاتی جدوجہد اپنی کانگریس منعقد کرا رہی تھی۔ اس وقت حالات خصوصی طور پر مشکل تھے۔ آسیہ بی بی کو بری کرنے کے سپریم کورٹ کے فیصلے کے بعد تحریک لبیک پاکستان نے سڑکیں بند کی ہوئی تھیں۔ میرے دوست فاروق طارق مجھے ایئر پورٹ سے لینے آئے اور ہمیں گھر پہنچنے میں بہت مشکل پیش آئی۔ ہم لال خان کے پاس اکٹھے گئے۔ اس نے گرمجوشی سے میرا استقبال کیا۔ کچھ ہی دیر میں‘ میں نے ایک فطری اور ذاتی قربت محسوس کی۔ ہم کامریڈ تھے اور میں ان کے گہرے اثر میں آ گیا تھا۔ میرے نزدیک میں نے ایک دوست کھویا ہے۔ حالانکہ ہمیں کبھی زیادہ دیر اکٹھے رہنے کا موقع نہیں ملا۔

میں بیماری اور جبر کے خلاف ان کے حوصلے کا معترف ہو چکا تھا اور میں نے ان کی تاریخ جاننے کی کوشش کی جو پاکستان میں بائیں بازو کی تاریخ کا ایک معتبر باب ہے۔

ای ایس ایس ایف کی ویب سائٹ پر ان کی تحریروں سے مجھے بہت کچھ سیکھنے کا موقع ملا۔

ان کے ماضی کے واقعات کو مد نظر رکھتے ہوئے میں اس بات کو جاننے کے قابل ہوا کہ ایک عظیم رہنما نے کیسے انقلابیوں کی نئی نسل کو ابھارا۔ لال خان نے شروع سے آخر تک عظیم تجربے کے ساتھ نئے جزبے سے جدوجہد کو جاری رکھا۔

میرے نزدیک بلا شبہ یہ ان کے خاندان، رشتے داروں، دوستوں، کامریڈوں اور پاکستانی و عالمی بائیں بازو کے لئے بہت بڑا نقصان ہے۔

مکمل یکجہتی…

بلاول بھٹو (چیئرمین پاکستان پیپلز پارٹی)

ڈاکٹر لال خان کا انتقال پاکستان میں بائیں بازو کے فکر و سیاست کے لئے ناقابل تلافی نقصان ہے۔ وہ زندگی کی آخری گھڑی تک انقلابی سوچ کے فروغ اور محنت کشوں کے حقوق کے لئے سرگرم رہے۔ وہ ملکی صورتحال اور عالمی حالات پر گہری نگاہ رکھتے تھے۔ ان کی قلمی خدمات کو تادیر یاد رکھا جائے گا اور محنت کش طبقہ ان سے ہمیشہ استفادہ حاصل کرتا رہے گا۔ ان کی وفات سے جو خلا پیدا ہوا ہے وہ مدتوں پر نہی ہو سکے گا۔

ضیاالدین یوسفزئی (ملالہ یوسفزئی کے والد)

معروف دانشور ڈاکٹر لال خان نے تمام عمر ان مظلوم اور اور مجبور طبقات کے حقوق کے لئے جدوجہد کی جو بد ترین معاشی استحصال کے گرداب میں پھنسے ہوئے ہیں۔ خدا انہیں کروٹ کروٹ جنت نصیب فرمائے۔

الیجینڈرو بودارٹ (رہنما ’ایم ایس ٹی‘ و ’انٹرنیشنل سوشلسٹ لیگ‘، ارجنٹینا)

ہمیں ابھی کامریڈ لال خان کے بچھڑنے کی افسوسناک خبر ملی ہے جو پاکستان کی ایک عظیم انقلابی پارٹی ’طبقاتی جدوجہد‘ کے بانی اور رہنما تھے۔

لال خان نے انقلابی پارٹی کی تعمیر کے لئے اپنی زندگی وقف کر دی۔ انقلابی سیاست کی تعمیر میں ان کے اہم کردار کی وجہ سے ہم انہیں ایک عظیم انقلابی کے طور پر یاد رکھیں گے۔

ہم دل کی اتھاہ گہرائیوں سے طبقاتی جدوجہد کے کامریڈوں سے تعزیت کرتے ہیں، جن کے ساتھ ہم عالمی پیمانے پر سوشلزم کی جدوجہد جاری رکھیں گے۔

علی وزیر (رہنما پی ٹی ایم و ممبر قومی اسمبلی)

میرے نظریاتی استاد کامریڈ تنویر گوندل، دنیا جنہیں ڈاکٹر لال خان کے نام سے جانتی ہے، آج ہم سے بچھڑ گئے۔ وہ کینسر سے لڑ رہے تھے۔

ان کو سرخ سلام! ان کی دی ہوئی نظریاتی تربیت ہمیشہ جدوجہد میں ہماری رہنمائی کرتی رہے گی۔

جواد احمد (گلوکار و رہنما برابری پارٹی پاکستان)

ڈاکٹر لال خان اس دور کے بہت بڑے نظریہ دان تھے۔ وہ میرے استاد تھے۔ ہم طریقہ کار پر اختلاف رکھتے تھے اس لئے میں نے برابری پارٹی بنائی۔ لیکن ہم طبقاتی سیاست پر یقین رکھتے تھے اور بہت گہرے دوست بھی تھے۔ ان کی وفات میرے لئے بہت بڑا صدمہ ہے۔

سردار صغیر خان (رہنما جموں کشمیر لبریشن فرنٹ)

کامریڈ لال خان غیر طبقاتی معاشرے کے قیام کے لئے محنت کش طبقے کی توانا آواز تھے۔ اس خطے میں انہوں نے نظریاتی اور سیاسی طور پر ہزاروں نوجوانوں کی تربیت کی۔ وہ اپنی آخری سانس تک اپنے نظریے پر قائم رہے۔ مظلوم طبقات کی خاطر ان کی جدوجہد ہمیشہ یاد رکھی جائے گی اور بالادست طبقے اور سامراجی طاقتوں کے خلاف لڑائی میں محنت کش طبقے کی رہنمائی کرتی رہے گی۔

عمار علی جان (رہنما حقوق ِ خلق موومنٹ)/ پروگریسو سٹوڈنٹس کلیکٹو (PSC)

سوشلسٹ انقلابی اور طبقاتی جدوجہد کے رہنما لال خان آج لاہور میں وفات پاگئے۔ وہ پاکستان میں مارکسزم کے بہترین استادوں میں سے ایک تھے جنہوں نے اس ملک میں ہزاروں نوجوان کارکنوں کی نظریاتی تربیت کی۔

ہم نے آج ایک انقلابی کھویا ہے۔ ڈاکٹر لال خان ان نایاب انقلابیوں میں سے ایک تھے جنہوں نے 90ء کی دہائی میں کمیونزم کی موت کے اعلانات کے باوجود انقلابی مارکسزم کا پرچم سربلند رکھا۔

عظیم ہوتے ہیں وہ لوگ جو بدعنوانی پر مبنی نظام میں ضم نہیں ہوتے بلکہ عام لوگوں کو درپیش مشکلات کے خاتمے کے لئے آواز بلند کرتے رہتے ہیں۔

کامریڈ لال خان کی زندگی اور جدوجہد کو سلام!

ہم ایک منصفانہ اور انسانی معاشرے کی تشکیل کی ان کی جدوجہد کو نہ صرف جاری رکھیں گے بلکہ تیز کریں گے۔

رقص مے تیز کرو ساز کی لے تیز کرو…
سوئے مے خانہ سفیران حرم آتے ہیں

عابد ساقی (صدر پاکستان بار ایسوسی ایشن)

جذبے اور دلیل کے ساتھ مظلوم لوگوں کے لئے مسلسل جدوجہد کو سرخ سلام!

ڈاکٹر لال خان ہم آپ سے پیار کرتے ہیں۔

رؤف کلاسرہ (صحافی و تجزیہ نگار)

ڈاکٹر لال خان، ایک حقیقی کامریڈ، ہم سے بچھڑ گئے۔ ایک بڑے آدمی، جو ساری زندگی ایک نظریے پر قائم رہے۔ ہمیشہ غریبوں کی خاطر جدوجہد کی اور بے آواز لوگوں کی آواز بنے۔ کامریڈ ریسٹ اِن پیس!

عوامی ورکرز پارٹی

ہم عوامی ورکرز پارٹی کے کارکن اور رہنما‘ تجربہ کار مارکسی رہنما اور استاد کامریڈ لال خان کے بچھڑنے پر غمزدہ ہیں۔ ہم عام لوگوں کے لئے ان کی سیاسی جدوجہد کو سلام پیش کرتے ہیں اور عوامی ورکرز پارٹی کے پلیٹ فارم سے ان کی جدوجہد کو جاری رکھنے کا اعادہ کرتے ہیں۔ ریسٹ اِن پاور کامریڈ!

جلیلہ حیدر (سماجی کارکن)

ریسٹ اِن پیس کامریڈ ڈاکٹر لال خان!

میں آپ کو اپنے بچپن سے جانتی ہوں جب میں سکول جایا کرتی تھی۔ آپ کوئٹہ میں ایگریگیٹ پر آیا کرتے تھے۔ میں بھی ان پروگراموں میں آیا کرتی تھی۔

ڈاکٹر لال خان کی وفات پاکستان میں سوشلسٹ سیاست کیلئے بہت بڑا نقصان ہے۔ آپ کی میراث سلامت رہے، زندہ رہے…

شہاب خٹک(رہنما عوامی ورکرز پارٹی)

کامریڈ لال خان کی دکھ بھری وفات پر عوامی ورکرز پارٹی دل کی گہرائیوں سے تعزیت کا اظہار کرتی ہے۔ ریسٹ اِن پاور کامریڈ!

عمار راشد (صدر عوامی ورکرز پارٹی پنجاب)

ڈاکٹر لال خان کے گزر جانے کا بہت گہرا دکھ ہوا۔ ڈاکٹر لال خان پاکستان میں ایک پر عزم اور انتھک مارکسی انقلابی تھے۔ انہوں نے اپنی تمام عمر محنت کش طبقے کی لڑائی لڑنے کے لئے وقف کر دی۔

میری خواہش ہے کہ ڈاکٹر لال خان نے جو بیج بوئے وہ خوب پھلیں پھولیں۔ ریسٹ اِن پاور کامریڈ۔

ڈاکٹر فرزانہ باری (سماجی رہنما)

میرے زندگی بھر کے عزیز دوست ڈاکٹر لال خان کے گزر جانے کے دکھ کو بیان کرنے کے لئے مجھے الفاظ نہیں مل رہے۔ سوشلزم کے لئے ان کی غیر متزلزل لگن اور وابستگی حیرت انگیز تھی۔

سوشلسٹ انقلاب کی طرف بڑھتے ہوئے ہر قدم پر ڈاکٹر لال خان ہمارے ساتھ رہیں گے۔ اس لئے ہم آپ کو الوداع نہیں کہیں گے تنویر…

آئمہ کھوسہ(ترقی پسند صحافی)

طلبہ یکجہتی مارچ پر لی گئی تصویر ڈاکٹر لال خان کی مکمل عکاسی کرتی ہے۔ تمام عمر وہ ایک عظیم استاد کی طرح نوجوانوں کی تربیت اور رہنمائی کرتے رہے اور ان کے بچھڑنے سے بہت بڑا خلا پیدا ہوا ہے۔ ریسٹ اِن پیس کامریڈ!

نثار شاہ (صدر جموں کشمیر عوامی ورکرز پارٹی)

کامریڈ لال خان اب ہمارے درمیان نہیں رہے۔ وہ عظیم مارکسی انقلابی اور دانشور تھے۔ محنت کش طبقات کے لئے ان کی خدمات ہمیشہ یاد رکھی جائیں گی۔

زاہد علی (حقوق ِ خلق موومنٹ)

ہم نے آج ایک انقلابی کو کھو دیا ہے۔ پاکستان کی بائیں بازو کی سیاست کا سرخ ستارہ ڈاکٹر لال خان ہمارے ساتھ نہیں رہا۔

ڈاکٹر لال خان انقلابیوں کے اس نایاب کروہ میں سے تھا جس نے 90ء کی دہائی میں کمیونزم کی موت کے اعلان کے باوجود انقلابی مارکسزم کا جھنڈا لہرائے رکھا۔